Home » News » صدر زرداری دبئی کے امریکی ہسپتال میں داخل، پاکستانی صدر طبی بنیادوں پر مستعفی ہوسکتے ہیں: امریکی کا دعویٰ

صدر زرداری دبئی کے امریکی ہسپتال میں داخل، پاکستانی صدر طبی بنیادوں پر مستعفی ہوسکتے ہیں: امریکی کا دعویٰ

  • Publish on December 8, 2011 in News
  • |
  • by admin

دبئی :صدرِ مملکت آصف علی زرداری کی طبیعیت خراب ہو گئی ہے جس پر اُنہیں دبئی کے ایک ہسپتال میں داخل کرا دیا گیا ہے جبکہ امریکی جریدے نے دعویٰ کیاہے کہ صدر زردای طبی بنیادوں پر مستعفی ہوسکتے ہیں تاہم ایوان صدر کے ترجمان نے اِس کی تردید کر دی ہے۔ تفصیلات کے مطابق صدر زرداری کو کے دل کے عارضے میں مبتلا ہیں، اسلام آباد میں طبی معائنہ کرانے کے بعد مزید معائنے اور علاج کے لیے دبئی پہنچے تھے۔ ایوان صدر کے ترجمان کے مطابق صدر مملکت اس دورے میں اپنے بچوں سے ملاقات کے علاوہ اپنا طبی معائنہ بھی کرائیں گے۔ معالجین کی ایک ٹیم اور ذاتی سٹاف بھی صدر مملکت کے ساتھ ہے۔ ترجمان نے بتایا کہ صدر کے ذاتی معالج کرنل سلمان نے اُن کو بعض عام نوعیت کے طبی ٹیسٹ تجویز کیے تھے جن کا تعلق صدر زرداری کو پہلے سے لاحق دل کے عارضے سے ہے۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ صدر دبئی روانگی سے قبل اسلام آباد یا راولپنڈی کے کسی ہسپتال معائنے کے لیے نہیں گئے تھے۔ دبئی سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق صدر آصف علی زرداری دو تین روز تک وہاں قیام کر سکتے ہیں اور صدر کی خواہش کے باوجود ڈاکٹروں نے اُنہیں گھر جانے کی اجازت نہیں دی تاہم طبی ٹیسٹوں کی بنیاد پر صدر کی صحت پر اطمینان کا اظہارکیاجارہاہے۔ دوسری طرف ایک امریکی جریدے کا دعویٰ ہے کہ دل کی تکلیف کے باعث دبئی کے ہسپتال میں زیرعلاج صدرآصف علی زرداری خرابی صحت کے باعث مستعفی ہوسکتے ہیں۔ ’فارن پالیسی‘ میں شائع ہونےوالے ایک آرٹیکل میں امریکی حکام کے حوالے سے انکشاف کیاگیاہے کہ صدرزرداری کو دل کا ہلکی نوعیت کا دورہ پڑاتھاجس کی وجہ سے اُنہیں فوری طورپرائیر ایمبولینس کے ذریعے دبئی کے امریکی ہسپتال پہنچایاگیاجہاں اُن کے ٹیسٹ کئے گئے۔ امریکی جریدے کے مطابق آج صدرزرداری کی انجیو گرافی کئے جانے کا امکان ہے۔ جریدے نے امریکی حکام کے حوالے سے یہ دعویٰ بھی کیاہے کہ صدرزرداری ناسازی طبع کے باعث اپنے عہدے سے مستعفی ہوسکتے ہیں۔ دوسری طرف امریکی تھنک ٹینک اٹلانٹک کونسل کے ڈائریکٹر برائے جنوبی ایشیا مرکزشجاع نواز کا کہنا ہے کہ صدرزرداری کا عہدہ صدارت سے مستعفی ہونا اِن ہاؤس تبدیلی کاایک ایسا آپشن ہے جس پر بات چیت کی جاتی رہی ہے اور زرداری کے صدر کے عہدے سے الگ ہوتے ہی اُن کی جماعت سے کسی کو صدربنادیاجائے گا۔ خیال کیا جاتا ہے کہ بدلتے ہوئے سیاسی اور عالمی حالات صدر کی طبعی ناسازی کا باعث بنے ہیں جبکہ سیاسی ماہرین کا خیال ہے کہ امریکہ کے ساتھ تعلقات کے تناظر میں صدر زرداری کی دبئی میں اہم ملاقاتیں بھی متوقع ہیں اور یہ صدر کی سیاسی نوعیت کی ناسازی طبع ہوسکتی ہے جس کا ’ابتدائی علاج‘دبئی سے شروع ہوگیاہے کیونکہ ڈاکٹروں نے انہیں ایک رات ہسپتال میں رہنے کی ہدایت کی ہے تاہم ایوان صدرنے ایسی تمام خبروں کی سختی سے تردید کرتے ہوئے کہاہے کہ یہ اطلاعات جھوٹی اور بے بنیاد ہیں جبکہ صدر زرداری کی صحت سے اِن کا کوئی تعلق نہیں۔ صدارتی ترجمان کاکہناتھاکہ صدر زرداری کے طبی معائنے کا وقت پہلے سے مقرر تھا۔ دوسری جانب وزیر داخلہ رحمان ملک کا کہنا ہے کہ صدر کو تین سٹنٹ ڈل چکے ہیں اور وہ پہلے ہی اپنے روٹین چیک اپ میں کافی دیر کر چکے ہیں اِس لیے اِس دفعہ وہ کسی قسم کا رسک نہیں لے رہے۔