Home » News » پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں کراچی کی صورتحال پر اظہار تشویش

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں کراچی کی صورتحال پر اظہار تشویش

  • Publish on March 29, 2012 in News
  • |
  • by admin

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں کراچی کی صورتحال پرتشویش ظاہر کرتے ہوئے مسئلے کے فوری حل کامطالبہ کیا گیاہے۔ اسپیکرقومی اسمبلی نے وزیرداخلہ کوہدایت کی ہے کہ وہ خود کراچی جا کر امن وامان کے حوالے سے ٹھوس اقدامات کریں۔پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں ن لیگ کے مشاہداللہ خان نے کہا کہ ان کے کارکن کو گولی مار کرقتل کیا گیا جس میں ایم کیوایم کے کارکن ملوث ہیں۔ انھوں نے کہا کہ اپنے کارکن کے قتل پراحتجاج کرنے والے دوسروں کوگولیوں کانشانہ کیوں بنا رہے ہیں۔ خواجہ سعدرفیق نے کہا کہ کراچی کاامن تباہ کرنیوالوں کیخلاف سخت ضابطہ تشکیل دیا جائے ۔اے این پی کے افراسیاب خٹک نے کہا کہ کراچی کومیدان جنگ بنا دیاگیا ہے حکومت بلیک میلرزاوردہشتگردوں کے آگے جھک جاتی ہے۔انھوں نے کہا کہ کراچی میں بسنے والوں کاوجودتسلیم کرنا ہوگا۔ایم کیوایم کے حیدرعباس رضوی نے کہا کہ کراچی میں تشدد کرنیوالوں کیخلاف کارروائی کے حامی ہیں قتل وغارت میں ملوث افراد کیخلاف کارروائی ہونی چاہے۔ اے این پی کے حاجی عدیل نے کہا کہ وزیرداخلہ ہمت کرکے کراچی کے حالات خراب کرنیوالے عناصر کے حوالےسے سچ بولیں۔اجلاس میں عثمان سیف اللہ خان ،ظفربیگ اورمظفرحسین شاہ نے قومی سلامتی کمیٹی کی سفارشات کی بحث میں حصہ لیتے ہوئے مطالبہ کیا کہ ڈرون حملوں کومارگرانے کی سفارش کواس قراردادکاحصہ بنایا جائے۔انھوں نے مطالبہ کیا کہ امریکہ کے ساتھ باہمی احترام پرمبنی تعلقات قائم کئے جائیں۔ پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس جمعہ کی صبح دس بجے ہوگا۔